پٹھوں میں کھچاؤ اور درد وجو ہات اور علاج

پٹھوں میں کھچاؤ اور درد وجو ہات اور علاج

آ ئیے چلتے ہیں آج کی نئی ٹپ کی طرف پٹھوں میں کھچاؤ اور درد ۔ وجو ہات اور علاج ۔ یہ مرض زیادہ تر عورتوں میں پا یا جاتا ہے لیکن مرد بھی اس میں مبتلا ہوتے ہیں گردن سے مونڈھے کی طرف آ نے والے پٹھے اس کھچاؤ میں آ جاتے ہیں کہ گردن ہلا نا مشکل ہو جاتی ہے اور پانی کا کوئی کام بھی کیا جائے تو تکلیف بڑھ جاتی ہے اور اگر سردی لگ جائے تو مرض میں اضافہ ہو جاتا ہے۔ علاج: مریض کی چائے بند کر دیں دودھ میں دیسی گھی کا ایک چمچ ڈال کر صبح شام پینا شروع کر دیں مغز بادام بیس عدد سو نف دو گرام دودھ میں جوش دیں اور دیسی گھی کا بھا گا ر لگا ئیں۔ یہ رات کو سوتے وقت مریض کو پلا ئیں بعد میں دانت اچھی طرح صاف کر لیں۔ پر ہیز: ہر قسم کا گوشت، دال مسور، کر یلے، میتھی ، پالک ، انڈے چائے، پکوڑے، تیز مصالحہ دار اشیا ئے مکمل پر ہیز کر یں۔ ماہرین غذا کے مطابق کچھ گھریلو علاج ایسے ہیں جن کے ذریعے پٹھوں کے درد پر کنٹرول کیا جاسکتا ہے خصوصا سردی کے موسم میں یہ علاج مفید ہوتے ہیں۔ ماہرین نے اس بات پر زور دیا کہ جسم کو مناسب مقدار میں پانی کی فراہمی ضروری ہوتی ہے کیونکہ پانی کی کمی براہ راست پٹھوں کی کمزوری کا سبب بنتی ہے اور وہ کمزور ہو جاتے ہیں۔ماہرین گھریلو اشیا میں ان پھلوں کے استعمال کا کا مشورہ دیتے ہیں۔کیلے میں پوٹاشیم کی موجودگی کی وجہ سے وہ پٹھوں کو لچکدار بناتا ہے، جدید تحقیق کے مطابق پوٹاشیم کی کمی پٹھوں کی کمزوری، تھکاوٹ اور درد کا باعث بنتی ہے۔ سرسوں کا تیل ایک قدرتی بہترین تحفہ ہے، اس کے استعمال سے خون کی گردش میں اضافہ ہوتا ہے، جس سے پٹھوں کی کمزوری دور ہوتی ہے اور پٹھے فعال ہو جاتے ہیں۔سرسوں کے چار چمچ تیل میں دس لہسن پیس کر ڈال لیں اس کے بعد اسے آگ پر گرم کرلیں یہاں تک کہ اس کا رنگ بھورا ہوجائے، پھر اسے دن میں کئی بار اس جگہ پر لگائیں جہاں درد ہورہا ہو۔کالی مرچ پٹھوں کے علاج کے لیے نہایت مفید ہے،اس سے سوزش اور جلن میں کمی ہوتی ہے۔کالی مرچ کاایک چمچ زیتون کے تیل کے دو چمچ کو آپس میں ملالیں،پھر جہاں درد ہو وہاں رات بھر مساج کریں،اسے دو یا تین دن تک جاری رکھیں،اسی طرح اس کے ساتھ ناریل کا تیل بھی شامل کرسکتے ہیں۔ماہرین کے مطابق اگر گھریلو علاج سے درد میں افاقہ نہ ہوتو ڈاکٹر سے رجوع کریں،کیونکہ پٹھوں میں درد کی وجوہات مختلف ہوسکتی ہیں۔ان نسخوں کے استعمال سے پٹھوں میں ہونے والے درد کو کافی حد تک کم کیا جا سکتا ہے اس تکلیف دہ درد سے چھٹکارا حاصل کیا جا سکتا ہے۔

Sharing is caring!

Categories

Comments are closed.